125

حضرت علی رضی اللہ تعالیٰ عنہ نے اصلاح کے متعلق فرمایا :

کبھی کسی کی اصلاح کے لئے اپنے آپ کو مت بگاڑو

جو شخص اپنے نفس کی حقیقت سے ناواقف رہتا ہے وہ اپنے حالت کی اصلاح سے بے نیاز رہتا ہے

جو شخص خود اپنے نفس کی اصلاح نہیں کرتا تو دوسروں کے حق میں کبھی مصلح نہیں بن سکتا

اپنے نفس کی اصلاح کی تدبیر اور کوشش کو مت چھوڑو کیونکہ یہ کوشش کے بغیر درست نہیں ہوگا

جو شخص تیرا ساتھ کرتا ہے مگر دے نفس کی اصلاح میں اعانت نہیں کرتا اس کا ساتھ تیرے حق میں وبال ہے

بادشاہ کا فرض ہے کہ اپنے لشکر کی اصلاح میں بیشتر اپنی اصلاح اور درستی کرے

اپنی غلطی کے تدارک میں جلدی کرنا اپنی اصلاح کی تدبیر ہے

اگر کوئی کام بگڑ  جا ئے تو اس کی اصلاح  کرو اگر کسی کے ساتھ احسان کرے تو اس کو پورا کرو

تیری فکر راست روی کی راہ دکھلاتی اور اصلاح معاد  کی طرف دعوت دیتی ہے

مجاہدہ نفس میں کمال اصلاح آخرت کے لئے عمل کرنے میں کامیابی اور فلاح ہے

جو شخص تھوڑے مال پر کنایت نہ کرے وہ اپنے نفس کی اصلاح کیسے کرسکتا ہے

عقل تمام چیزوں کی اصلاح کرنے والی ہے

جس کا عقل ٹھیک نہ ہو وہ اپنے خیال میں اصلاح کرتا ہے مگر اسے فساد برپا ہوتا ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں